نارووال اسپورٹس سٹی ریفرنس:نیب کاایف آئی اے سےپراناریکارڈ

سابق وزیرداخلہ احسن اقبال کیخلاف نارووال اسپورٹس سٹی ریفرنس کی پہلی سماعت میں نیب نے ایف آئی اے گوجرانوالہ سے پرانا ریکارڈ پیش کرانے کی اجازت مانگ لی۔

جمعرات کو احتساب عدالت کےانچارج  جج محمد بشیر نے کرپشن ریفرنس دائر ہونے کے بعدکیس عدالت نمبر3 کے جج اصغر علی کو منتقل کیا۔ کیس کا تمام ریکارڈ بھی منتقل کردیا گیا۔احتساب عدالت میں احسن اقبال،اخترنوازگنجیرا اور سرفراز رسول پیش ہوئے۔

دوران سماعت نیب پراسیکیوٹر نے کہا کہ یہ کیس ایف آئی اے سے نیب کو منتقل ہوا تھا،عدالت اجازت دے کہ ہم ایف آئی اے گوجرانوالہ سے پرانا ریکارڈ بھی لانا چاہتے ہیں۔عدالت نےریفرنس کے نقول ملزمان کو فراہم  کرنے کی ہدایت کرتے ہوئے ملزمان کو 30 نومبر کوطلب کرلیا۔

احتساب عدالت کے باہر میڈیا سے گفتگومیں احسن اقبال نے کہا کہ بالآخر حکومت اور نیب نے ڈھائی سال بعد ریفرنس دائر کیا ہے،حکومت جھوٹے مقدمے بنا کرسمجھتی ہے کہ اس کی ناکامیوں سے لوگوں کی توجہ ہٹ جائے گی۔ انھوں نے کہا کہ نارووال اسپورٹس سٹی کیس احتساب کی تاریخ میں بڑا لطیفہ ثابت ہو گا اوردنیا اس بات پر ہنسے گی کہ کھیلوں کی سہولت فراہم کرنا جرم تھا۔

احسن اقبال نے کہا کہ مجھ پر کسی کرپشن کا نہیں بلکہ اختیار کے غلط استعمال کا الزام ہے۔ انھوں نے کہا کہ کھیل کی دنیا میں پاکستان کا کوئی کھلاڑی وکٹری اسٹینڈ پر کھڑا نہیں ہوتا اورہمارے ملک میں ایسے مزید منصوبوں کی ضرورت ہے۔ انھوں نے مزید کہا کہ یہ کیس اس بات کا ثبوت ہے کہ کس طرح حکومت اپوزیشن کو جھوٹے مقدموں سے نشانہ بنا رہی ہے۔

واضح رہے کہ نیب راولپنڈی نے گزشتہ روز سینئر لیگی رہنما احسن اقبال سمیت 5 ملزمان کے خلاف ریفرنس دائر کیا تھا۔

Source link

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *