پوسٹ مارٹم رپورٹ میں انکشاف ہوا ہے کہ خیرپور کے اے ایس آئی کی لاش قتل کے بعد جل گئی تھی

خیرپور: جمعہ کے روز پوسٹ مارٹم رپورٹ میں انکشاف ہوا ہے کہ اسسٹنٹ سب انسپکٹر (اے ایس آئی) بلاول وسان کی لاش کو بے دردی سے قتل کردیا گیا تھا۔

اے ایس آئی پیپلز پارٹی کے سینئر رہنما منظور وسان کا بھتیجا اور وزیر اعلی سندھ نواب خان وسان کے مشیر تھے۔ اس کی چاردیدہ اور شناخت شدہ لاش اور گاڑی 18 نومبر کو بھارگانی کے شاہ عبد اللطیف یونیورسٹی پولیس اسٹیشن کے قریب سے ملی تھی۔

وسان کی پوسٹ مارٹم رپورٹ میں انکشاف ہوا ہے کہ اس کے قتل کے بعد لاش کو جلایا گیا تھا۔ اس رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ اس کے ہاتھ اور پیر ٹانگیں کٹ گ. تھیں اور اس کی کھوپڑی اور پسلیوں میں فریکچر تھے۔

پولیس نے بتایا کہ یہ قتل جسم اور گاڑی کو جلا کر کسی حادثے کی طرح دکھائ دیا گیا تھا۔

پولیس نے بتایا کہ دو گرفتار ہوئے ہیں۔ وہ دونوں بلاول کے دوست ہیں۔ ان میں سے ایک فراز راجپوت کو ایک روز قبل ہی کراچی سے تحویل میں لیا گیا تھا جب بلاول کی کار میں آگ لگی تھی۔

پولیس نے بتایا کہ راجپوت نے فرار ہونے کی کوشش کی تھی اور ایک عینی شاہد نے اس کی شناخت کی تھی۔ اس نے پولیس کو بتایا کہ گاڑی سے ملنے والی لاش کا تعلق اے ایس آئی بلاول کی ہے۔

وسان فیملی کے ترجمان نے بتایا کہ یہ منصوبہ بند قتل تھا۔ انہوں نے بتایا کہ پولیس افسر کو پہلے ہلاک کیا گیا اور بعد میں اس کی گاڑی کو جلایا گیا تاکہ وہ ثبوت چھپائے۔

.

Source link

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *