Decisions on schools to be taken on Monday

وفاقی وزیرتعلیم شفقت محمود نے کہا ہے کہ پیر 23 نومبر کو نیوزکانفرنس میں تعلیمی اداروں کےلیے اہم فیصلوں کااعلان کیاجائےگا۔

شفقت محمود نےاتوار کو ٹویٹ کرتے ہوئے کہا کہ بڑھتےہوئےکروناکیسزکی صورتحال کاجائزہ لینےکیلئےکل بروز پیر اہم اجلاس ہوگا جس میں چاروں وزرائےتعلیم ویڈیولنک پراجلاس میں شرکت کریں گے۔

وفاقی وزیرتعلیم نے بتایا کہ اجلاس کےاختتام پرکل ساڑھے12بجےدوپہر اہم نیوزکانفرنس کروں گاجس میں تعلیمی اداروں کے حوالےسے اہم فیصلوں کااعلان کیاجائےگا۔

واضح رہے کہ تمام صوبوں کی جانب سے تعلیمی اداروں سے متعلق سفارشات وفاق کو بھجوادی گئی ہیں۔ اجلاس میں ہونے والے فیصلوں سے صوبائی حکومتوں کو آگاہ کیا جائے گا تاکہ ان کا اطلاق کیا جاسکے۔این سی او سی کی جانب سے تعلیمی اداروں میں کرونا کیسز کی وجہ سے جلد اور طویل موسم سرما کی تعطیلات دینے کا فیصلہ بھی زیرغور ہے تاکہ طالبعلموں کی صحت کا تحفظ یقینی بنایا جاسکے۔

ملک میں تعلیمی اداروں کو 15 ستمبر سے مرحلہ وار کھولا گیا تھا اور اکتوبر تک ملک کے تمام تعلیمی اداروں سخت شرائط کے ساتھ کھول دئیے گئے۔تاہم کرونا کیسز رپورٹ ہونے پر ملک بھی میں کئی تعلیمی اداروں کو بند بھی کیا گیا۔پاکستان بھر میں تعلیمی سرگرمیاں مارچ سے متاثر ہیں اور طلب علموں کو آن لائن ذرائع کے ذریعے تعلیم دی جارہی ہے۔

بلوچستان

واضح رہے کہ محکمہ تعلیم بلوچستان کی جانب سے 20 نومبر کو صوبے بھر کے اسکولوں میں امتحانات ملتوی کرنے کا نوٹی فیکیشن جاری کیا گیا ہے۔سیکریٹری تعلیم بلوچستان کی جانب سے جاری نوٹی فیکیشن کے مطابق صوبے بھر میں کرونا کیسز میں اضافے کے بعد صوبائی محکمہ تعلیم نے سالانہ امتحانات ملتوی کردیئے ہیں۔ رواں ماہ نومبر کے آخر میں ہونے والے پہلی جماعت سے مڈل کے امتحانات اگلے سال 10 مارچ کوہونگے۔سیکریٹری تعلیم شیرجان بازئی کا کہنا تھا کہ اسکولوں کے نتائج پر مڈل امتحانات کے سرٹیفکیٹ جاری کئے جائیں گے،سالانہ امتحانات کے فورا بعد نئے تعلیمی سال کا آغاز کردیا جائے گا۔

مرحلہ وار اسکولز بند ہوسکتے ہیں

وفاقی وزیر اطلاعات و نشریات شبلی فراز کا کہنا تھا کہ کرونا کی وباء بڑھ گئی تو ایسی صورت حال پیدا ہو جائے گی کہ اسپتالوں میں جگہ نہ ہو،یہ قومی ایشو ہے، ہمیں ذمہ داری کا مظاہرہ کرنا چاہیے، اسکولوں کو بھی مرحلہ وار بند کرنے کی طرف جا سکتے ہیں۔

وزیر تعلیم پنجاب مراد راس

وزیرتعلیم پنجاب مراد راس کا کہنا تھا کہ ہم نے وہ فیصلہ لینا ہے جو طلبہ اور اساتذہ کیلئے بہتر ہو،سب سے زیادہ ایس او پیز پر اسکولوں میں عمل ہو رہا ہے،اگربچے اسکول نہیں جا رہے تو یہ نہ ہو کہ بچوں کوشاپنگ مال،تفریحی مقامات یا مری وغیرہ لے جائیں۔انھوں نےمزید کہا یہ چھٹیاں نہیں ہیں،جوآن لائن پڑھائی کرسکتے ہیں وہ کرینگے،سردیوں کی چھٹیاں اگر ابھی دینی ہیں تو گرمیوں کی چھٹیاں کم کرنا پڑیںگی۔

Source link

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *